Ab Bhi Aati Hai Sakina Ki Sadain

اب  بھی  آتی  ہیں  سکینہ  کی  صدائیں  لوگوں  ہائے  زندانوں  سےمیری  بابا  سے  ملا  دو  میں  دعائیں دوں  گی , سسکیاں  لے  کے  جو  کہتی  تھی  مسلمانوں  سے
بولے  سجاد  سکینہ  یہ  مقدّر  تیرابے  کفن  تجھ  کو  لئے  پھرتا  ہوں  بازاروں  میںاور  لہو  اب ہی بھی   جاری  ہے تیری  کانو ں سے
جا  کے  مقتل  میں  پکاری  یہ  سکینہ  رو  کربھئیا  قاسم  میرے  اکبر  تم  کہاں  ہو  سارےمیرے  بابا  کو  بچا  لو  آکے  شیطانوں  سے
جب  چلی  گھر  سے  تیرے  ساتھ  سب ہی  تھے  زینبعون و محمد و  اکبر  یاد  آتے  ہوں  گئےلوٹ کے آئی جو ہوگی تو ابھی خانوں سے
لبِ  دریا  سے  علمدار  کی  آئی  یہ  صدااے  سکینہ  تجھ سے  شرمندہ  ہے  چا  چا  تیراپانی  پہونچا  نہ  سکا  ہائے  کٹائے  شانو ں  سے
آٹھ آذانیں بہ یک  وقت  فضا  میں  گونجیثانیِ زہرہ  کی  خطبوں  کو  دبانے  کی  لیےشور  برپا  کیا  دیربا  میں  آذانوں سے
قائمِ آلِ محمد یہ  ہے اخطر کی دعاسچ ہے حسنین کا  ہے مولا صداِ ماتمحشر  تک یوں ہی صدا گونجے عزا خانوں سے

اپنا تبصرہ بھیجیں